Sun. May 15th, 2022

کوپن ہیگن: ڈنمارک میں سائنس دان انسانی دماغ کے ایک ٹکڑے کو پہلی بار جسم سے باہر زندہ رکھنے میں کامیاب ہو گئے۔

تفصیلات کے مطابق تاریخ میں پہلی بار سائنس دانوں نے انسان کے دماغ کے ایک چھوٹے سے ٹکڑے کو جسم سے باہر ایک پیٹری ڈش میں 12 گھنٹے زندہ رکھ کر بڑی کامیابی حاصل کر لی ہے۔

انسانی دماغ اتنا حساس ہے کہ اس کا ایک حصہ بھی الگ ہوکر فوری طور پر مر جاتا ہے، اور اس میں کسی قسم کی کوئی حیاتیاتی سرگرمی نہیں رہتی، لیکن ماہرین نے دماغ کے ایک سینٹی میٹر حصے کو بارہ گھنٹوں تک زندہ رکھا۔

کوپن ہیگن یونیورسٹی کی ڈاکٹر ایما لیوس لوتھ کی سربراہی میں سائنس دانوں کے ایک گروپ نے ایک مریض کے کارٹیکس سے دماغ کے ٹشو کا ایک ٹکڑا نکالا اور اس کے زندہ رہنے کو یقینی بنانے کے لیے تیزی سے ایک نیا عمل شروع کیا۔

ٹیم نے پہلے اس ٹشو کو ٹھنڈا کیا، اسے آکسیجن سے بھرا رکھا تاکہ خلیات زندہ رہیں، اور پھر اس چھوٹے سے ٹکڑے کو آئنز (برقی چارج والے مالیکیول) اور معدنیات کے ایک مرکب میں رکھ دیا، یہ وہی اجزا ہیں جو دماغی ریڑھ کی ہڈی کے مائع جات میں پائے جاتے ہیں۔

لوتھ کا کہنا تھا کہ یہ جاننا علاج کے نئے مواقع کا باعث بن سکتا ہے، مثال کے طور پر فالج کے بعد بحالی کے سلسلے میں یا شدید دماغی نقصان کی دوسری اقسام، جہاں مریض کے دماغ کے نیورونز میں رابطہ ختم ہو جاتا ہے اور نئے کنیکشنز پیدا کرنے کی ضرورت ہوتی ہے۔ ہم نے یہ دیکھا کہ ڈوپامِن انسانوں اور چوہوں میں مختلف کردار ادا کرتی ہے، اس تجربے سے انسانی بافتوں پر ادویات کی براہ راست جانچ کی اہمیت اجاگر ہوتی ہے۔

واضح رہے کہ اس ٹکڑے میں اعصابی خلیات زندہ تھے اور ان سے برقی سگنل بھی پھوٹ رہے تھے، اس اہم صورت حال میں ماہرین کئی طرح کے تجربات کو بالکل نئے انداز میں انجام دے سکتے ہیں۔ محققین کا یہ گروپ فی الحال ایک ایسے طریقے پر کام کر رہا ہے جس سے دماغ کے چھوٹے ٹکڑوں کو 10 دن تک زندہ رکھا جا سکے۔

خیال رہے کہ اس تجربے کے لیے انسانی دماغ کے ٹکڑے کو استعمال کیا گیا، جس پر سوالات اٹھ سکتے ہیں، ڈاکٹر لوتھ نے بتایا کہ پہلی بات تو یہ کہ اس سے درد محسوس نہیں ہوتا، اور ہر قسم کے جذبات یا خیالات دماغ کے کئی حصوں سے گزرتے ہیں، ہم نے جس ٹکڑے پر کام کیا، وہ انسانی انگوٹھے کے سب سے بیرونی حصے کے سائز جتنا تھا، اور یہ دماغ کے دوسرے حصوں سے منسلک نہیں ہے، میں لوگوں کی اس حیرانی کو سمجھ سکتی ہوں کہ پیٹری ڈش میں جو نیوران موجود ہے، کیا اس میں یادداشت ہے، لیکن میں یہ بتاؤں کہ یہ ممکن نہیں ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *